نقل و حمل

نقل و حمل (transport) یا نقحملیات (transportation)، یعنی نقل و حمل سے مُراد افراد، مال مویشی، جانوروں اور اجناس (goods) کا ایک جگہ سے دوسری جگہ حرکت ہے۔ آمد و رفت کے وسائل (modes of transport) میں ہوا، ریل، سڑک، پانی، طناب (cable)، نلخط (pipeline) اور خلاء شامل ہیں۔ نقل و حمل کے میدان کو بنیادی ڈھانچہ (infrastructure)، ناقلات (vehicles) اور تشغیلات (operations) میں تقسیم کیاجاسکتا ہے۔ نقل و حمل بہت اہم ہے کیونکہ یہ لوگوں کے درمیان تجارت کو ممکن بناتی ہے، جس سے تہذیبیں قائم ہوتی ہیں۔

نقحملی بنیادی ڈھانچہ میں نقل و حمل کے لیے ضروری مستقل تنصیبات شامل ہیں، جیسے سڑکیں، آہنراہیں (railways)، فضائی رستے (airways)، آبی رستے (waterway)، نہریں (canals)، نلخطوط (pipelines) اور انتہائیہ جات (terminals) مثلاً ہوائی اڈے، آہنراہی اڈّے (railway or train stations)، بس اڈّے، گودامات، شاحنتی انتہائیہ جات (trucking terminals)، بازایندھن یابی انبارخانے (refueling depots) (بمشول ایندھن یابی لنگرگاہیں (refueling docks) اور ایندھنی اڈّے) اور بندرگاہیں وغیرہ۔ انتہائیہ جات کو سامان اور مسافروں کے بین تبادُل (interchange) اور اِصلاح (maintenance) دونوں کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔

اِن جالاتِ کار (networks) پر سفر کرنے والوں میں خودمتحرکات (automobiles)، دوچرخات (bicycles)، بسیں، ٹرینیں، ٹرکیں، لوگ، بالگرد اور ہوائی جہاز شامل ہیں۔

ICE1 Schellenberg
قِطار، نقل و حمل کا ایک اُسلُوب

اشتقاقیات

لفظ نقل و حمل دراصل نقل و حمل کا اِختصار ہے۔ نقل و حمل کی اِصطلاح عربی سے ماخوذ ہے جس میں نقل کا مطلب ہے منتقل ہونا یا کرنا یا حرکت اور حمل کی معنی اُٹھانے، ڈھونے یا لادنے کی ہوتی ہے، چونکہ اِس اِصطلاح میں لفظ نقل زیادہ تر (عام) اُردو میں ایک کاغذ سے دوسرے کاغذ پر اُتارنے کی معنی میں استعمال ہوتا ہے اِس لیے ابہام سے بچنے کے لیے اِس کے ساتھ حمل کا اِضافہ کرکے اِسے افراد اور سامان کو لادنے، ڈھونے یا ایک جگہ سے دوسری جگہ منتقل کرنے کی معنی میں استعمال کیا جاتا ہے۔ اِسے باربرداری اور آمد و رفت بھی کہاجاتا ہے۔ کچھ متعلقہ الفاظ درج ذیل ہیں:

  • نقل و حمل / نقل و حمل / باربرداری : Transport
  • نقحملیات / نقلیات و حملیات : Transportation
  • نقل و حمل کرنا / باربرداری کرنا (ایک جگہ سے دوسری جگہ منتقل کرنا / ہونا) (فعل)
  • نقحملی : Transporting
  • محمول / منقول / منتحمول / منتحمیل / منتقل شدہ : Transported
  • مُنتحَمِّل / باربردار : Transporter
  • مُحَمِّل : Transporter / Carrier
  • ناقِل : Transporter

نیز دیکھیے

انٹرنیشنل ایئر ٹرانسپورٹ ایسوسی ایشن

انٹرنیشنل ایئر ٹرانسپورٹ ایسوسی ایشن یا بین الاقوامی ہوائی نقل و حمل ایسوسی ایشن (International Air Transport Association) جس اس کے مخفف نام آیاٹا (IATA /aɪˈɑːtə/)

سے بلایا جاتا ہے دنیا کی ایئر لائنز کی ایک تجارتی تنظیم ہے۔ 117 ممالک کی نمائندگی کرنے والی تقریباً 260 ایئر لائنز پر مشتمل آیاٹا کے تحت ایئر لائنز کل دستیاب نشستیں کا تقریبا 83٪ ہیں۔آیاٹا ایئر لائنز کی سرگرمی کی حمایت اور صنعت پالیسی اور معیارات مرتب کرنے میں مدد کرتی ہے۔ اس کا صدر دفتر مانٹریال، کینیڈا جبکہ اس کا ایگزیکٹو دفاتر جنیوا، سویٹزرلینڈ میں واقع ہے۔

انٹرنیشنل ایئر ٹرانسپورٹ ایسوسی ایشن ایئرپورٹ کوڈ

انٹرنیشنل ایئر ٹرانسپورٹ ایسوسی ایشن ایئرپورٹ کوڈ یا بین الاقوامی ہوائی نقل و حمل ایسوسی ایشن ہوائی اڈا رمز (International Air Transport Association airport code) جسے عام طور پر آیاٹا ایئرپورٹ کوڈ (IATA airport code) اور (IATA location identifier, IATA station code) بھی کہا جاتا ہے ، دنیا بھر کے ہوائی اڈوں کے لیے ایک تین حرفی رمز ہے جسے انٹرنیشنل ایئر ٹرانسپورٹ ایسوسی ایشن (آیاٹا) تفویض کرتا ہے۔

خان پور ریلوے اسٹیشن

خان پور ریلوے اسٹیشن پاکستان کے شہر خان پور میں کراچی - پشاور مرکزی ریلوے لائن پر واقع ہے۔ یہ پاکستان ریلویز کا ایک اہم ریلوے اسٹیشن ہے اور

یہاں مرکزی ریلوے لائن سے گزرنے والی کافی ٹرینں رکتی ہیں۔

یہاں سے ٹرینیں پاکستان کے مختلف شہروں کو جاتی ہیں جن میں کراچی، لاہور، فیصل آباد، راولپنڈی، سیالکوٹ، سرگودھا، گوجرانوالہ، ملتان، پشاور، کوئٹہ، حیدرآباد، رحیم یار خان، سکھر، روہڑی، جھنگ، نوابشاہ، گجرات، جہلم، نوشہرہ، جیکب آباد سبی، اٹک، خانیوال، کوٹری اور نارووال شامل ہیں۔

داھابیجی ریلوے اسٹیشن

داھابیجی ریلوے اسٹیشن پاکستان میں واقع ہے۔

درگائی ریلوے اسٹیشن

درگائی ریلوے اسٹیشن پاکستان میں واقع ہے۔

دوزن ریلوے اسٹیشن

دوزن ریلوے اسٹیشن پاکستان میں واقع ہے۔

ریلوے اسٹیشن

ریلوے اسٹیشن ایسی جگہ کو کہا جاتا ہے جہان ٹرینیں رکتیں ہیں اور مسافر ان میں سوار یا ان سے اترتے ہیں۔ انگريزی میں ریلوے اسٹیشن کو Train Station, Railway Station یا Railroad Station کہا جاتا ہے۔ Railway Station انگريزی کے الفاظ ہیں تاہم اردو میں اس کو ریلوے اسٹیشن ہی کہا جاتا ہے۔

عام طور پر ریلوے اسٹیشن چند ریلوے لائنوں، پليٹ فارموں، شیڈوں اور ایک یا چند عمارتوں پر مشتمل ہوتا ہے۔

سیالکوٹ جنکشن ریلوے اسٹیشن

سیالکوٹ جنکشن ریلوے اسٹیشن صوبہ پنجاب کے شہر سیالکوٹ میں وزیر آباد - نارووال برانچ ریلوے لائن پر واقع ہے۔ یہ اسٹیشن 1880ء میں برطانوی دور حکومت میں قائم کیا گیا۔ یہ سیالکوٹ شہر - سیالکوٹ چھاونی ریلوے لائن کا جنکشن ہے۔ قیام پاکستان سے قبل یہ ریلوے لائن سیالکوٹ کو جموں سے منسلک کرتی تھی۔

لاہور کینٹ ریلوے اسٹیشن

لاہور کینٹ ریلوے اسٹیشن پاکستان میں واقع ہے۔

نوشہرہ جنکشن ریلوے اسٹیشن

نوشہرہ جنکشن ریلوے اسٹیشن پاکستان میں واقع ہے۔

پاکستان ریلویز

پاکستان ریلویز ( انگريزی: Pakistan Railways ) جس کا سابقہ نام 1947ء سے فروری 1961ء تک شمال مغربی ریلوے (North Western Railway)، فروری 1961ء سے مئی 1974ء تک پاکستان مغربی ریلوے (Pakistan Western Railway) تھا، حکومت پاکستان کا ایک محکمہ ہے جو پاکستان میں ریلوے خدمات فراہم کرتا ہے۔ اس کا صدر دفتر لاہور میں ہے اور یہ وزارت ریلوے کے تحت کام کرتا ہے۔ پاکستان ریلویز پاکستان کی معیشت میں ریڑھ کی ہڈی کی طرح اہم ہے جو پاکستان میں بڑے پیمانے پر آمد و رفت کی سستی تیز رفتار اور آرام دہ سہولیات فراہم کرتا ہے۔

چاغی ریلوے اسٹیشن

چاغی ریلوے اسٹیشن پاکستان میں واقع ہے۔

چورمیاں ریلوے اسٹیشن

چورمیاں ریلوے اسٹیشن پاکستان میں واقع ہے۔

چھور ریلوے اسٹیشن

چھور ریلوے اسٹیشن پاکستان میں واقع ہے۔

ڈنڈوت ریلوے اسٹیشن

ڈنڈوت ریلوے اسٹیشن پاکستان میں واقع ہے۔

گاٹ ریلوے اسٹیشن

گاٹ ریلوے اسٹیشن پاکستان میں واقع ہے۔

گریٹ انڈین جزیرہ نما ریلوے

گریٹ انڈین جزیرہ نما ریلوے ایک کمپنی تھی جو سنٹرل ریلوے انڈیا اور پاکستان ریلوے سے پہلے بر صغیر میں کام کرتی تھی۔

گلنگر ریلوے اسٹیشن

گلنگر ریلوے اسٹیشن پاکستان میں واقع ہے۔

گڑھی خیرو ریلوے اسٹیشن

گڑھی خیرو ریلوے اسٹیشن پاکستان میں واقع ہے۔

ہوائی اڈا

ہواگاہ یا طیران گاہ (airport)، جسے عام زبان میں ہوائی اڈا (یا اڈا) کہاجاتا ہے، ایک جگہ جہاں ہوائیہ جیسے طیارے، بالگرد اور ہوائچے پرواز کرتے اور اُترتے ہیں۔

اطلاقی علم
اطلاعات
صنعت
عسکریہ
گھریلو
ہندسیات
صحت / سلامتی
تنقل

دیگر زبانیں

This page is based on a Wikipedia article written by authors (here).
Text is available under the CC BY-SA 3.0 license; additional terms may apply.
Images, videos and audio are available under their respective licenses.